خبر
1/4/2020
پوری  قوت کے ساتھ  واقفین کے ذریعے وقف کی گئيں املاک کی حفاطت کریں گے، متولی   آستان قدس

 
پوری قوت کے ساتھ واقفین کے ذریعے وقف کی گئيں املاک کی حفاطت کریں گے، متولی آستان قدس

آستان نیوز کی رپورٹ کے مطابق، حجۃ الاسلام والمسلمین احمد مروی نے آستان قدس رضوی کے  لئے  اپنی املاک و جائيدا د   وقف  کرنےوالوں کے اعزاز میں منعقدہ چوتھے  اجلاس میں، اس  بات کا ذکرکرتے ہوئے  کہ آستان قدس رضوی واقفین حضرات   کے اقدامات کی  قدر دانی کو اپنا فرض  سمجھتا  ہے ، کہا کہ  واقفین حضرات کی ہمت افزائي کے پروگرام  آیت شریفہ«منیُعَظِّمْ شَعَائِرَ اللَّهِ فَإِنَّهَا مِن تَقْوَى الْقُلُوب»  کے مصداق  ہیں اور شعائر الہی کی تعظیم کی راہ میں ایک قدم ہے ۔
انہوں نے اس بات پر زور دیتے ہوئے  کہ وقف کی ثقافت کی ترویج   ،معاشرے میں  شعائر الہی کی تعظیم کا مصداق اور معارف الہی کی توسیع کا سبب ہے  کہا کہ ہر شخص کو یہ توفیق حاصل نہیں ہوتی کہ اپنے مال و دولت میں سے ایک حصہ کسی کار خیرکے لیے مخصوص کردے، البتہ یہ مال ظاہری لحاظ سے مخصوص ومسدود ہوجاتا ہے جب کہ حقیقت میں اس میں اضافہ ہوتا ہے    ۔

آستان قدس رضوی کے   متولی نے اس بات کا ذکرکرتے ہوئے کہ وقف کے دنیوی و اخروی بہت زیادہ آثار و برکات ہیں کہا کہ  آیات و روایات کی بنیاد پر روزقیامت کوئی بھی کسی کی مدد نہیں کرسکے  گا    اور سب اپنے اعمال کی فکر میں  ہوں گے، لیکن وقف کے اعمال ہمیشہ  انسان کے ساتھ رہیں گے  ۔

انہوں نے اس بات پر تاکید کرتے ہوئے کہ آستان قدس رضوی   اپنی پوری طاقت  وتوانائي کے ساتھ   واقفین حضرات کے موقوفات کی حفاظت کرے گا  کہا کہ موقوفات میں سے ایک ریال بھی واقفین کی نیت سے ہٹ کر کسی دوسری راہ میں خرچ نہیں کریں گے  اور اب    تک   ایسا ہی ہوتا  آیا ہے   اور ہم آئندہ بھی اس موضوع کی حساسیت کے پیش نظر ایسا ہی کریں گے۔ 

آستان قدس رضوی کے  متولی نے واقفین کی نیت کے مطابق   وقف کے مال  کو خرچ کرنے کو  آستان قدس رضوی کے کاندھوں پر ایک شرعی فریضہ  قراردیا اور کہا: وقف کو دقیق طور پر استعمال کرنا آستان قدس رضوی کے فرائض میں سے ہےکہ جس پر ہم پوری دقت کریں گے ۔ 

انہو ں  نے آستان قدس رضوی کے موقوفات کو حضرت امام علی رضا علیہ السلام سے واقفین کی  محبت و عقیدت سے تعبیر کیا اور اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ بہت سے لوگ کہتے ہیں کہ آستان قدس رضوی کو وقف کی ضرورت نہیں ہے کہا کہ اول تو یہ کہ آستان قدس رضوی کی دولت  و ثروت کے بارے میں  جوباتیں کی جاتی ہیں وہ   کسی بھی لحاظ سے  صحیح نہيں ہیں   دوسرے یہ کہ  اس  ملکوتی بارگاہ کے لئے جو بھی وقف و نذر کیا جائے گا  وہ  حضر ت امام رضا علیہ السلام کے پرچم کے سائے میں زیادہ سے زیادہ خیرو برکت کا باعث ہوگا  

انہوں نے موقوفات  اور ہدیوں کے  ذرائع سے  آستان قدس رضوی کے بعض عام المنفعۃ اقدامات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے   کہا کہ  آستان قدس رضوی نے رواں ایرانی سال میں   تقریبا 70 ارب تومان  ملک کے سیلاب زدہ علاقوں میں لوگوں  کو روز گار کی فراہمی کے لئے   خرچ کیے ہیں ۔ اسی طر ح نادار  اورمفلس لوگوں کو جو  پہلی مرتبہ زیارت  امام رضا علیہ السلام کی زیارت سے مشرف ہوئے ہيں انہيں   زیارت کے سفر  کے اخراجات  دئے ہيں    علاوہ ازیں  غریب گھرانوں  کو مالی پیکج  اور بے سہار ا  اور مالی اعتبار سے کمزور لڑکیوں کے لئے جہیز کا بھی انتظام آستان قدس رضوی نے انہی موقوفات کی آمدنی سے کیا ہے   
   
وزٹرز کی تعداد:38
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...