خبر
7/28/2019
دحو الارض اور اس کے اعمال

 
دحو الارض اور اس کے اعمال

دحوالارض یعنی جس دن زمین بچھائی گئی، اس دن کی اسلام کی نظر میں بہت اہمیت ہے، اس دن سے مخصوص کچھ اعمال ہیں جن کو اس مضمون میں پیش کیا گیا ہے

 دحو الارض کے معنی زمین کو پھیلانے کے ہیں چونکہ لغت میں دحو کے معنی پھیلانے کے ہیں اور بعض اہل لغت نے اس کے معنی پھینکنے کے کئے ہیں اور چونکہ یہ دونوں معنی لازم اور ملزوم ہیں لہذا ایک ہی مطلب کی طرف پلٹتے ہیں، اس بنا پر دحو الارض کا مطلب یہ ہے کہ ابتدا میں سطح زمین طوفانی بارشوں سے بھری ہوئی تھی اس کے بعد یہ پانی دھیرے دھیرے زمین کے سوراخوں میں چلا گیا اور زمین کی خشکی سامنے آگئی یہاں تک کہ موجودہ حالت میں آگئی[۱]

سورہ نازعات کی ۳۰ویں آیت میں((وَالْأَرْضَ بَعْدَ ذَلِکَ دَحَاهَا[سورہ نازعات، آیت:۳۰]اس کے بعد زمین کا فرش بچھایا ہے ))، زمین کے پھیلائے جانے کی طرف اشارہ ہے، بعض روایات میں آیا ہے کہ زمین کو سب سے پہلے کعبہ کے نیچے سے پھیلانا شروع کیا گیا،

جیسا کہ رسول خدا(صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم) نے اس حدیث میں فرمایا: ((دُحِیَتِ الْأَرْضُ مِنْ مَکَّةَ وَ کَانَتِ الْمَلَائِکَةُ تَطُوفُ بِالْبَیْتِ وَ هِیَ أَوَّلُ مَنْ طَافَ بِهِ وَ هِیَ الْأَرْضُ الَّتِی قَالَ اللَّهُ إِنِّی جاعِلٌ فِی الْأَرْضِ خَلِیفَةً [۲]
زمین مکہ سے بچھنا شروع ہوئی، فرشتے خانہ کعبہ کے اطراف طواف کررہے تھے، وہ سب سے پہلی جگہ ہے جہاں پر طواف کیا گیا))۔
     حضرت علی(علیہ السلام) سے کسی نے سوال کیا کہ مکہ کو مکہ کیوں کہتے ہیں؟  آپ نے فرمایا: ((لأن الله مک الأرض من تحتها، أی دحاها[۳]
اس لئے کہ زمین، مکہ کے نیچے سے پھیلنا شروع ہوئی))۔
     امام رضاعلیہ السلام نے جب خراسان کا سفر کیا، اس سفر کے دوران پچیس ذیقعدہ کو آپ مرو میں پہنچے اور  آپ نے فرمایا: آج کے دن روزہ رکھو میں نے بھی روزہ رکھا ہے، راوی کہتا ہے ہم نے پوچھا اے فرزند رسول آج کونسا دن ہے؟  فرمایا: وہ دن جس میں اللہ کی رحمت نازل ہوئی اور زمین کا فرش بچھایا گیا[۴]

اس دن کے اعمال
یہ دن بہت بابرکت دن ہے اور اس کے کچھ مخصوص اعمال ہیں:
۱: روزہ رکھنا(اس دن کا روزہ ستر سال کا کفارہ ہے)[۵]۔
۲: شب دحوالارض کو بیدار رہنا[۶]۔
۳: اس دن کی مخصوص دعائیں پڑھنا[۷]۔
۴: اس دن غسل کرنا اور ظہر کے نزدیک اس طریقے سے نماز پڑھنا۔
ہررکعت میں سورہ حمد کے بعد پانچ مرتبہ سورہ الشمس پڑھے اور سلام کے بعد کہے: لا حَوْلَ و لا قوَّهَ اِلّا بِالله العلی العظیم"  اور اس دعا کو پڑھے " یا مُقیلَ الْعَثَراتِ اَقِلْنی عَثْرَتی یا مُجیبَ الدَّعَواتِ اَجِبْ دَعْوَتی یا سامِعَ الْاَصْواتِ اِسْمَعْ صَوْتی وَ ارْحَمْنی و تَجاوَزْ عَنْ سَیئاتی وَ ما عِنْدی یا ذَالْجَلالِ وَ الْاِکْرام[۸]۔
۵: مفاتیح الجنان میں موجود اس دن کی دعا پڑھنا جو ان کلمات سے شروع ہوتی ہے: للّهمّ یا داحِی الْکعبهَ وَ فالِقَ الْحَبَّه.. "
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منبع:http://www.welayatnet.com/ur/node/2950
   
وزٹرز کی تعداد:40
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...