خبر
1/15/2019
بحرینیوں اورافغانستانیوں سے مخصوص ثقافت رضوی سفیروں کے لیے تعلیمی میٹنگ

 
بحرینیوں اورافغانستانیوں سے مخصوص ثقافت رضوی سفیروں کے لیے تعلیمی میٹنگ

بحرین و افغانستان سے ثقافتی اساتذہ و مربیوں نے  رضوی ثقافت سفیروں کی خصوصی میٹنگ میں کہ جو (حضرت زینب کی سیرت کی وضاحت اور دشمن شناسی کی ضرورت) کے عنوان سے منعقد تھی ،شرکت کی ۔
آستان نیوز : " حضرت زینب کی سیرت کی وضاحت اور دشمن شناسی کی ضرورت" کے عنوان سے خصوصی میٹنگ میں  کہ جو آستان قدس رضوی کے ادارہ امور زائرین غیر ایرانی کی جانب سے منعقد تھی ، شیخ اسد القصیر نے کہ جو ایک اسلامی محقق ہیں حضرت زینب کبری سلام اللہ علیہا کی زندگی کی طرف اشارہ کیا اور کہا: حضرت زینب  سلام اللہ علیہا کی عظمت کے سلسلے میں گفتگو کرنا کوئی آسان کام نہیں ہے اور وہ احادیت کو جو آئمہ طاہرین علیہم السلام سے ہم تک پہنچی ہیں ان کو درک کرنے سے ان عظیم و جلیل القدر خاتون کو پہچاننے اور معرفت حاصل کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔
انہوں نے حضرت زینب کے عالم لدنی و علم الہی کے حامل ہونے کو حضرت کی ایک نشانی قرار دیا اورکہا: خداوندعالم نے حضرت کو علم و یقین کا ایک خاص درجہ ومقام والا عطافرمایا تھا۔
قصیر نے کہا: حضرت کا علم آپ کے مقام و عظمت پر دلالت کرتا ہے، کربلا کا دردناک واقعہ کا تحمل کرنا اور پھر صبر اور کلام میں سنجیدگی آپ کی عظمت اور درجہ الہی کی طر ف اشارہ کرتی ہے کہ  اورتمام اہل بیت  طاہرین و رسول اکرم علیہم السلام آپ کےعالم علم لدنی ہونے سے واقف و باخبر تھے۔
حجۃ الاسلام  القصیر نے تاکید کی : خداوندعالم نے حضرت زینب سلام اللہ علیہا کو انتخاب کیا تاکہ ان کو  ایک عظیم ذمہ داری سپرد کرے ، جس طرح حضرت زینب سلام اللہ علیہا کی رفتار و گفتار انتہائی دلنشین و متین ہیں اسی طرح حضرت کا اس دردناک واقعہ پر صبر بھی حیرت انگیز ہے۔
انہوں نے اس بیان کےساتھ کہ جس طرح انبیا ء و آئمہ علیہم السلام علم الہی و علم لدنی کے حامل ہیں اسی طرح حضرت زینب سلام اللہ علیہا بھی عالمہ غیرمعلمہ اور عالمہ علم لدنی تھیں ، مزید کہا: یہ بصیرت ان حوادث کے مقابل اور وعدہ الہی کے متحقق ہونے کی تجلی ہے کہ جو خداوندعالم نے ارشاد فرمایا ہے: " اے ایمان لانے والو  ! اگر خداوندعالم سے ڈرو تو تمہارے لیے حق و باطل کے درمیان پہچان و معرفت کا وسیلہ قرار دے گا۔


   
وزٹرز کی تعداد:65
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...