خبر
1/12/2019
اٹلی سے تعلق رکھنے والے جوان نے حرم مطہر رضوی میں حاضر ہو کر اسلام قبول کر لیا

 
اٹلی سے تعلق رکھنے والے جوان نے حرم مطہر رضوی میں حاضر ہو کر اسلام قبول کر لیا

ایٹالین جوان نے روضہ منورہ امام علی رضا علیہ السلام میں اسلام قبول کر لیا اور حضرت امام علی رضا علیہ السلام سے محبت و عقیدت کی وجہ سے اپنے لئے نام رضا کو انتخاب کیا۔ 
آستان نیوز کے خبرنگار کی رپورٹ کے مطابق؛ آج بوقت ظہر ۲۶ سالہ جوان جناب کارملو کوکو جس کا تعلق اٹلی کے شہر سیس سے ہے اس نے آستان قدس رضوی کے ادارہ مدیریت زائرین غیر ایرانی کے دفتر میں حاضر ہو کر شہادتین کو زبان پر جاری کرتے ہوئے اسلام قبول کر لیا۔ 
وہ اپنے اسلام لانے کے بارے میں وضاحت دیتے ہوئے کہتے ہیں: میں جہاں پر کام کرتا ہوں اسی جگہ کے قریب ایک مسجد تھی جس میں تین وقت اذان دی جاتی تھی اور اذان کی دلنشین آواز سے میں بہت خوش ہوتا تھا اور اس آواز سے خاص تعلق و رابطہ ہو گیا تھا۔
مزید وضاحت دیتے ہوئے کہا: مسجد میں نماز پڑھنے والے چند ایک مسلمانوں سے آشنا ہوا ، لیکن دین اور ان کے عقائد کے بارے میں مجھے کچھ معلومات نہیں تھیں۔

گفتگو کو جاری رکھتے ہوئے کہا: گذشتہ سال ایک ایکسڈنٹ میں سر پر چوٹ لگنے کی وجہ سے قومہ میں چلا گیا تھا اور ڈاکٹرمیرے دوبارے واپس زندگی میں لوٹنے سے مکمل نا امید ہو چکے تھے،میرے ایک مسلمان دوست کو جب پتہ چلا تو وہ دن میں آکر میرے سرہانے قرآن پڑھا کرتا تھا۔
اس نئے مسلمان نے بتایا: عالم رؤیا میں اس دلنشین آواز سے میرے دل کو سکون ملتا تھا ، کچھ دن گزرنے کے بعد جب میں ہوش میں آیا تو سب ڈاکٹروں نے اسے ایک خدائی معجزہ جانا۔ 
انہوں نے کہا: ہوش میں آنے اور صحت پانے کے بعد میری زندگی مکمل طور پر تبدیل ہو گئی اب میں قرآن سننا بہت زیادہ پسند کرتا تھا ، اس لئے ناخواستہ طور پر ایسے راہ میں قدم رکھا جس کی نسبت کوئی رغبت نہیں رکھتا تھا ، ان تمام شرائط کے باوجود میں اپنا دین تبدیل کرنے کے چکر میں نہیں تھا۔ 
رضا نے بتایا: میں نے مسلمانوں دوستوں کے ساتھ رابطہ مزید بڑھایا اور اس دین کے بارے میں پوچھ گوچھ کرنا شروع کی کیونکہ میں اس نتیجہ پر پہنچ چکا تھا کہ جس راہ پر چل رہا ہوں اسی پر مجھے سکون ملتا ہے۔ 
اس جوان نے مسلمان ہونے کے لئے مقدس مکان کو انتخاب کرنے کے سلسلے میں بتایا: کچھ دوستوں کے ساتھ مل کر مشہد آنے کا فیصلہ کیا کیونکہ چاہتا تھا کہ قریب سے اسلام اور مسلمانوں سے آشنا ہوں۔ 
انہوں نے اس بات پر تاکید کی کہ خوشبختی ایک قلبی عطا ہے اور اگر سب اپنے دل کی آواز کو سنیں تو سکون ملے گا،میں جب اس حرم میں حاضر ہوا ہوں تو مجھے بہت سکون ملا ہے اور اسی وجہ سے مسلمان بھی ہوا ہوں۔ 

   
وزٹرز کی تعداد:15
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...