خبر
9/5/2016
عرفہ

 
عرفہ

روز عرفہ کی خصوصیات میں سے ایک یہ ہے کہ یہ خود ایک بہت بڑی عید ہے ساتھ میں اس کے بعد عید قربان بھی ہے ، عرفہ کی رات اور دن میں خداوند متعالی اپنے بندوں پر خاص توجہ کرتا ہے اورجو لوگ دعا اور مناجات میں مشغول ہوں ان پر اپنی رحمت کو نازل فرماتا ہے اس رات میں جو مستحبات ذکر ہوئے ہیں اس سے معلوم ہوتا ہے یہ بڑی رات ہے اور اس رات خداوند متعالی دعا اور مناجات اور استغفار کو قبول کرتا ہے ۔
لہذا ہمیں چاہئے کہ اس رات اور دن کے اعمال اور مستحبات پر توجہ دیں ، اس دن کے اہم مستحبات میں سے ایک روزہ رکھنا ہے البتہ اگر یہ دعا میں ضعف کا سبب نہ ہو۔
میں یہاں پر عرفہ کے بارے میں دو مطلب کو بیان کرنا چاہتا ہوں ایک مطلب دعا عرفہ کے ذیل میں جو مضمون ہے اس کے بارے میں ہے کہ بعض اوقات کچھ لوگ اس ذیل کو خاص اہمیت دیتے ہیں ۔
اس بارے میں بحث اور گفتگو ہے کہ آیا دعا عرفہ کایہ ذیل امام حسین علیہ السلام کے دعا سے مربوط ہے یا اس سے کوئی ربط نہیں ہے ؟ کفعمی نے کتاب بلد الامین اور مجلسی نے کتاب زاد المعاد(گذشتہ زمانہ میں یہ کتاب آج کل کے مفاتیح کی طرح ہر کسی کے پاس ہوتے تھے کہ دعا کی ایک بہت اچھی کتاب ہے ) میں اس ذیل کو ذکر نہیں کیا ہے ،مرحوم مجلسی بحار الانوار کی جلد ٩٨ میں لکھا ہے :«قد أورد الکفعمی أیضاً هذا الدعا فی البلد الأمین و إبن طاووس فی مصباح الزائر «قد أورد الکفعمی أیضاً هذا الدعا فی البلد الأمین و إبن طاووس فی مصباح الزائر»«کماسبقذکرهماولکنلیسفیآخرهفیهمابقدرورقٍتقریباً» مرحوم مجلسی فرماتا ہے دعا کا یہ حصہ: الهی أنا الفقیر فی غنای فکیف لا أکون فقیراً فی فقری» نہ سید ابن طاووس کی کتاب مصباح الزائر میں اور نہ کفعمی کی کتاب بلد الامین میں ۔
سید کی کتاب اقبال کے بعض نسخوں میں ذکر ہوا ہے :«وکذا لم یوجد هذه الورقة فی بعضٍ نسخ العتیقة من الإقبال» اور بعض دوسرے نسخوں میں یہ ذکر نہیں ہوا ہے ، اس کے بعد مرحوم مجلسی فرماتا ہے: دعا کے اس حصہ میں جو مضامین ذکر ہوا ہے وہ معصومین علیہم السلام سے منقول دعاوں کے سیاق سے سازگار نہیں ہے «و إنما هی علی وفق مذاق الصوفیة» یہ صوفی طبع سے سازگار ہے «ولذلک قد مال بعض الافاضل إلی کون هذه الورقة من مزیدات بعض مشایخ الصوفیة و من إلحاقاته و إدخالاته»بعض صوفی افراد نے ان جملات کو اضافہ کیا ہے ۔
دعا کے اس پیرگراف کو دیکھنے کے بعد معلوم ہوتا ہے کہ مرحوم مجلسی کی بات صحیح ہے کہ اس پیرگراف میں جو مضامین ہے وہ ائمہ کے دعائی کلمات سے متناسب نہیں ہے ۔
آپ اگر صحیفہ سجادیہ کو اول سے آخر تک مطالعہ کریں ، مجھے تو یاد نہیں کہ ایسا تعبیر اس میں موجود ہو، یا یہ عبارت «الهی طهّرنی من شکّی و شرکی قبل حلول رمصی» میں نے بہت سوچا (البتہ کامل طور پر تحقیق تو نہیں کیا) کہ کیا دعا ابوحمزہ یا صحیفہ سجادیہ یا کسی اور جگہ پر کسی امام معصوم (ع) نے ایسا فرمایا ہے : الهی طهّرنی من شکّی و شرکی، نہیں ملتا ، البتہ اس طرح بیان ہوا ہے:«أعوذ بک من الشکّ و الشرک» یعنی میں تم سے پناہ مانگتا ہوں شک اور شرک سے ، لیکن یہ تعبیر «الهی طهّرنی من شکّی و شرکی قبل حلول رمصی» میرے مرنے سے پہلے ،مجھے قبر میں جانے سے پہلے پاکیزہ کریں ، ایسا تعبیر کہیں بھی ذکر نہیں ہے۔
یا ایک اور جملہ یہ ہے«الهی حقّقنی بحقایق أهل القرب واسلک بی مسلک أهل الجذب» اہل جذب اور اہل قرب یہ دونوں عرفااور صوفیہ کی اصطلاح ہے ،مقربین قرآن کریم میں ذکر ہوا ہے :«السّابقون السّابقون اولئک المقرّبون»لیکن اہل قرب ذکر نہیں ہوا ہے ' یا یہ جملہ :«الهی علمت باختلاف الآثار و تنقّلات الأطوار أنّ مرادک منّی عن تتعرف إلیّ فی کلّ شیءٍ حتّی لا أجهلک فی شیء» یہ الفاظ واقعا امام معصوم(ع) اور دعاوں سے مناسب کلمات نہیں ہے انہی وجوہات کی بناء پر انسان کو یہ گمان ہوتا ہے کہ یہ ذیل امام حسین (ع) کی دعا عرفہ میں سے نہیں ہے ۔
اب اگر کوئی اسے رجا ءً یا احتمال کے طور پر پڑھے تو اس میں کوئی اشکال نہیں ہے لیکن یہ نہیں بتا سکتے کہ اسے امام حسین (ع) نے فرمایا ہے ، مخصوصا اس پیرگراف سے پہلے دعا کے آخر میں جو ''یا رب یا رب '' ذکر ہے نقل ہے کہ امام(ع) اور ان کی اہلبیت نے اس قدر اس کو پڑھا اور روئے کہ سورچ غروب ہو گئے اور آمین کہا اور دعا ختم ہوگئی اور مشعر کی طرف روانہ ہو گئے۔
بعض نے نقل کیا ہے کہ ''ا لحکم العطائیہ'' کے نام آٹھویں صدی کی کسی صوفی کی ایک کتاب ہے جس کا نام ابن عطای اسکندرانی تھا اور عرفانی مقام و منزلت رکھتا تھا ، کسی نے کہا ہے کہ دعا کی اس آخری حصہ کے تمام کلمات کو میں نے اس کتاب میں دیکھا ہے ' ممکن ہے بعد میں آہستہ آہستہ ان جملات کو دعا عرفہ کے ساتھ ملا ہو اور اس دعا کے ذیل میں لایا گیا ہو۔


دوسرا مطلب: دعا عرفہ کے کلمات پر توجہ دینا ہے ' یعنی اس دعا عرفہ میں کچھ ایسے مضامین ہیں کہ انسان کو بہت ہی جلد خدا سے نزدیک کر دیتا ہے ، اگرچہ تمام دعا یں خدا سے تقرب پید اکرنے اور اس سے ملانے کے لئے ہے کہ انسان کو دنیا اور دنیوی تعلقات سے کٹا کر خدا سے ملا لیں ' لیکن اس دعا میں مختلف جگہوں پر کچھ ایسے تعابیر موجود ہیں کہ بہت ہی اہم ہے ۔
دعا عرفہ کے مضامین کو بیان کرنے سے پہلے ایک مطلب کی یاد آوری ضروری ہے کہ عرفہ کے دن جن چیزوں کی بہت زیادہ سفارش ہوئی ہے ان میں سے ایک خدا کی تسبیح کرنا ہے یہ مستحب ہے، سید نے کتاب اقبال میں تسبیحات عشری جو ذکر کیا ہے انسان جتنا ممکن ہو اس کو تکرار کریں «سبحان الذی فی السماء عرشه»یہ تسبیحات اس لئے ہے کہ انسان کا ناقص اور ضعیف ذہن کبھی خدا وند متعالی کے بارے میں توجہ نہیں رکھتا ، خدا تو واقعامنزہ ہے لیکن ہمیں چاہئے کہ اپنے آپ کو خدا کے تمام نقائص سے پا ک اور منزہ ہونے کو باور کرائے۔
یہ تسبیحات انسانی ذہن کو پاکیزہ، نفس کو رو شن ، قلب کو نورانی اور روح کو خدا سے نزدیک کرتا ہے ، لہذا انسان جتنا ہو سکے ان تسبیحات کو پڑھیں مناسب ہے ۔یہ تسبیحات انسان کے ذہن سے غلط چیزوں کو نکال لیتی ہے ، اگر آسمان ہے تو عرش خد اہے اور اگر زمین ہے تو حکم خدا ہے ' اگر قبر ہے تو قضاء خدا ہے ' اگر جہنم ہے تو سلطان خدا ہے ' اگر جنت ہے تو رحمت خدا ہے ' اگر قیامت ہے تو یہ عدل خدا ہے ، تمام چیزیں خدا سے مربوط ہے ، دنیا اور آخرت ، زمین اور آسمان ، دریا اور خشکی تمام کے تمام چیزیں خدا سے مربوط ہے ۔


پس ان تسبیحات کو عرفہ کے دن زیادہ سے زیادہ پڑھنا چاہئے، بعض ایسے اذکار ہیں کہ عرفہ کے دن سو بار اسے پڑھنا چاہئے۔
حضرت امام حسین علیہ السلام دعا عرفہ میں ایک جگہ پر فرماتا ہے:«و إن اعدّ نعمک و مننک و کرامک و منحک لا احصیها یا مولای» انسان ان نعمتوں کا متذکر ہو جائے جسے خدا نے عطا کیا ہے ، اور اس سے پہلے یہ اعتراف کر لیں کہ ہم ان نعمتوں کو گننے سے قاصر ہیں ، خدایا!میں اگر تمہاری عطا کی ہوئی نعمتوں کو گننا چاہوں تو ممکن نہیں ہے ۔
اس کے بعد حضرت عرض کرتا ہے :«أنت الذی مننت» انسان کو چاہئے کہ ہمیشہ ان کو پڑھیں صرف روز عرفہ سے مخصوص نہیں ہے ' انسان جب خدا سے راز و نیاز کرتا ہے ، نماز شب پڑھتا ہے ، جب اکیلا ہے ، تو ان اذکار کو پڑھا کریں ، تم نے مجھ پر مہربانی کی ہے ، «انت الذی انعمت» تم نے مجھے نعمت عطا کی ہے «أنت الذی أحسنت» تم نے مجھ سے نیکی کی ہے «أنت الذی أجملت، أنت الذی أفضلت، أنت الذی أکملت، أنت الذی رزقت» اگر مجھ میں کوئی اچھائی ہے اگر مجھ میں کوئی ظاہری اور باطنی خوبصورتی ہے 'اگر مجھ میں کوئی علم ہے 'تو یہ سب تم نے ہی عطا کی ہے میرا اپنا تو کچھ بھی نہیں ، اگر کوئی رزق ہے تو تو نے عطا کی ہے '«أنت الذی اعطیت أنت الذی اغنیت»میں ابھی اگر بے نیاز ہوں اور میرا ہاتھ کسی کی طرف دراز نہیں ہوتا ہے تو تم نے کیا ہے تو نے مجھے بے نیاز کیا ہے ، تو نے مجھے پناہ دی ہے ، میرے لئے تو ہی کافی ہے ' تو نے میری ہدایت کی ہے ، تو نے مجھے لغزشوں سے بچا کر رکھاہے، کبھی انسان اپنے آپ کو دیکھ کر مغرور ہوتا ہے ، کہتا ہے میں نے تو کوئی گناہ کبیرہ انجام نہیں دیا ہے ، ایسا سوچنا خودگناہ ہے ، خدا نے ہمیں بچا کر رکھا ہے «أنت الذی سترت أنت الذی غفرت أنت الذی أعنت».۔
خصوصاً ہم طلاب علوم دینی جب ان مادی ، معنوی ، علمی اور غیر علمی نعمتوں کا متوجہ ہوتے ہیں تو اپنی جگہ سے اٹھ کر دو رکعت نماز پڑھ لیتے ہیں اور یہی کہتے ہیں کہ خدایا! تو نے میری مدد کی ہے کہ میں دو رکعت نماز پڑھ سکا، قرآن کی تلاوت کریں تو یہ بتائیں کہ تو نے مجھے توفیق عنایت کیا ، آئمہ معصومین علیہم السلام کی زیارت کے لئے جاتے ہیں تو یہ بتائیں کہ تو نے مجھے توفیق عنایت کی ہے ، اگر تہماری طرف سے یہ توفیق نہ ہوتی تو میں ان کاموں کو انجام نہیں دے سکتا ، ہمیں ہمیشہ ایسا ہی بتانا چاہئے اور اپنے جگہ پر یہ یقین پیدا کرے کہ ہمارے پاس جو کچھ بھی ہے وہ سب کے سب خدا کی طرف سے ہے۔
امام حسین (ع) اس دعا میں فرماتا ہے :«ثم أنا یا الهی المعترف بذنوبی فاغفر حالی»میں سب سے پہلے گناہ کا اعتراف کرتا ہوں ، تو میری گناہوں کو معاف فرمایا،«أنا الذی عصیت أنا الذی الذی أخطأت أنا الذی جَهِلتُ»خدایا ! میں نے برا کیا ہے ، میں نے غلطی کی ہے ، میں نے نادانی کی ہے «أنا الذی غفلت» غفلت خود مجھ سے سرزد ہوئی ہے ' اشتباہ خود مجھ سے مربوط ہے۔
اس کے بعد عرض کرتا ہے :«فبأی شیءٍ أستقبلک یا مولای أبسمعی»بہت ہی عجیب عبارت ہے ! ان جملات کے بعد کہ میں کون ہوں ، میں نے نادانی کی ہے ، میں نے غلطی کی ہے ، اس کے بعد خدا سے عرض کرتا ہے : میں کیسے تمہاری درگاہ پر آجاؤں ؟ «استقبلکیامولای،أبسمعی؟أمببصری،أمبلسانی،أمبیدی،أمبرجلی،ألیسکلّهانعمکعندی»ان تمام نعمتوں کو تو نے عطا کی ہے ، ان تمام نعمتوں کو جو تو نے عطا کیا ہے میں نے ان کے ذریعہ تمہاری نافرمانی کی ہے ،«فلک الحجّة و السبیل علیّ»تمہیں مجھ پر حجت ہے ' یعنی میرے بارے میں جو بھی حکم کرے ، میرے بارے میں جو بھی بتائیں وہی صحیح ہے ۔
امام (ع) ان کلمات سے اپنے آپ کی تعارف کراتا ہے ، واقعاً دعا عرفہ میں جو مضامین اور کلمات ہیں ہمارے زندگی میں بہت زیادہ موثر ہے ، ان دعاؤں کو ہم پڑھیں اور اپنے نفس کو اس کی تلقین بھی کرائے ، مخصوصاً نماز کے قنوت میں ان دعاؤں کو پڑھیں ،خوش نصیب ہے وہ انسان جو نماز کے قنوت میں ان دعاؤں کو پڑھتا ہے ، خدا وند متعالی کیا کیا اسے عطا کیا ہے ۔
خدا وند متعالی نے وعدہ کیا ہے کہ اگر کوئی ماہ رمضان میں بخشا نہیں گیا تو روز عرفہ پر امید رکھیں ، ہم یہی عرض کرتے ہیں خدایا! ہمیں امید ہے کہ اس دن اپنے وسیع رحمت کو ہمارے لئے نصیب فرمائے گا۔والسلام علیکم و رحمة الله و برکاته

 
وزٹرز کی تعداد:232
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...