خبر
4/21/2019
وزیراعظم پاکستان کی آستان قدس رضوی کے متولی سے ملاقات

 
وزیراعظم پاکستان کی آستان قدس رضوی کے متولی سے ملاقات

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے اپنے دو روزہ سرکاری دورہ ایران کا آغاز مشہد مقدس میں حضرت امام علی رضا علیہ السلام کے حرم کی زیارت سے کیا ۔ 
وزیراعظم پاکستان اور ان کے ہمراہ وفد نے امام رضا علیہ السلام کے حرم کی زیارت کے بعد آستان قدس رضوی کے متولی حجت الاسلام شیخ احمد مروی سے بھی ملاقات کی ۔ آستان قدس رضوی کے متولی  نے پاکستان کے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں کہا کہ عالمی سامراجی طاقتوں کی تفرقہ انگیز سازشوں کو ناکام بنانے اور علاقے سے ان کے سامراجی ہاتھوں کو کاٹ دینے کا  بہترین طریقہ ایران اور پاکستان کے اشتراکات اور خاص طور پر معنوی اور مذہبی رشتوں کی تقویت ہے ۔
حرم مطہر رضوی کے ولایت ہال میں انجام پانے والی اس ملاقات میں آستان قدس رضوی کے متولی نے وزیراعظم پاکستان کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے اپنا یہ دورہ جو حضرت امام رضا علیہ السلام کی زیارت اور ان سے توسل کے ذریعے شروع کیا ہے اس دورے پر ہم آپ کو خوش آمدید کہتے ہں اور یقینی طور پر حضرت امام رضا علیہ السلام کی عنایات اور الطاف دونوں ملکوں کی اقوام کے شامل حال ہوں گے اور آپ بھی اس زیارت کی برکتوں سے مستفید ہوں گے ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی عوام کے ایمان و اعتقادات انتہائی خالص اور پختہ ہيں اور پاکستانی عوام کا یہ ایمان و عقیدہ خواہ وہ شیعہ ہوں یا سنی پیغمبراسلام صل اللہ علیہ وآلہ وسلم اور اہلبیت اطہار علیھم السلام سے ان کی محبت و عقیدت میں جلوہ گرہے ۔ آستان قدس رضوی کے متولی نے کہا کہ اسلامی انقلاب ،  امام خمینی رحمت اللہ اور امام خامنہ ای سے پاکستانی عوام کی محبت ایک غیر معمولی چیز ہے جو دونوں ملکوں کے باہمی تعاون کو فروغ دینے کے لئے بہترین ذریعہ ہے ۔ انہوں نے اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ ایران اور پاکستان کے عوام کے تعلقات دو ہمسایہ ملکوں کے روایتی تعلقات سے بالاتر ایک برادرانہ  رشتہ اور تعلقات ہیں کہا کہ دونوں ملکوں کے عوام کے تعلقات کی تقویت کا اہم ترین ذریعہ اور محرک حضرت امام رضا علیہ السلام سے ان کی محبت و عقیدت ہے ۔ 
آستان قدس رضوی کے متولی حجت الاسلام شیخ احمد مروی نے کہا کہ غیرملکی زائرین میں سب سے زیادہ ، پاکستانی زائرین    مشہد مقدس آتے ہيں اس مقدس بارگاہ اور اس شہر کو وہ اپنا گھر سمجھتے ہيں اور انہیں یہاں کسی بھی طرح کی غریب الوطنی کا احساس نہیں ہوتا ۔

انہوں نے علاقے سے متعلق سامراجی پالیسیوں کا ذکرکرتے ہوئے کہا کہ  برصغیر کے علاقے کے بارے ميں سامراج کی سوچ اور نگاہ  ہمیشہ تفرقہ ڈالنے اور اپنی مرضی چلانے کی رہی ہے اور اس کے لئے اس نے ہمیشہ قومی اور مذہبی اختلافات کو ہوا دینے کی کوشش کی ہے 

  آستان قدس رضوی کے متولی نے کہا کہ عالمی سامراجی طاقتوں کی تفرقہ انگیز سازشوں کو ناکام بنانے اور علاقے سے ان کے سامراجی ہاتھوں کو کاٹ دینے کا بہترین طریقہ ایران اور پاکستان کے اشتراکات اور خاص طور پر معنوی اور مذہبی اشتراکات کی تقویت  اور ان میں سرفہرست پاکستانی زائرین کے لئے امام رضا علیہ السلام کی زیارت کے لئے زیادہ سے زیادہ سہولتیں فراہم کرنا ہے ۔

 انہوں نے کہا کہ ایرانی وزارت خارجہ پاکستانی زائرین کی زیارت کو آسان بنانے کے لئے پوری سنجیدگي سے کام کررہی ہے۔ اسی طرح ایرانی وزارت خارجہ نے اربعین حسینی کے موقع پر ایران کے سرحدی راستے میرجاوہ سے کربلائے معلی جانے والے پاکستانی زائرین  کی سہولت کے لئے   حالیہ چند برسوں سے کام کررہی ہے ۔ 

پاکستان کے وزیراعظم عمران  خان نے بھی اس ملاقات میں اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ان کا ملک ایران کے ساتھ اپنے تعلقات کو اعلی ترین سطح پر لے جانے کا خواہشمند ہے کہا کہ میں اپنی حکومت کے دور میں پوری کوشش کروں گا کہ پاکستان اور ایران کے تعلقات کو جتنا ممکن ہوسکے بہترین سطح پر لے جاؤں گا ۔ وزیراعظم پاکستان عمران خان نے کہا کہ آج امت مسلمہ کی مشکلات کی وجہ یہ ہے کہ اس نے اصل اسلام کی تعلیمات سے دوری اختیار کرلی ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اس وقت مشکل اور سخت دور سے گذر رہا ہے اور ہماری کوشش ہے کہ ملک کو نبی پاک صل اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تعلیمات و سیرت کے مطابق  اور ریاست مدینہ کو سامنے رکھ کر چلائيں 

   
وزٹرز کی تعداد:170
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...