خبر
12/6/2018
جوان نسل کے اندر شوگر اور موٹاپے کی وجہ سے قلبی امراض بڑھ رہی ہیں

جرمنی سے ہارٹ اسپیشلسٹ کا کہنا ہے؛  
جوان نسل کے اندر شوگر اور موٹاپے کی وجہ سے قلبی امراض بڑھ رہی ہیں

جرمنی سے تشریف لانے والے ہارٹ اسپیشلسٹ کا کہنا تھا: جوان نسل کے اندر شوگر اور موٹاپے کے باعث قلبی امراض روز بروز بڑھ رہی ہیں۔ 
آستان نیوز کے اخباری نمائندے کی رپورٹ کے مطابق؛ آج بوقت صبح ایران و یورپین ڈاکٹرز کی دوسری بین الاقوامی کانگریس رضوی ہسپتال میں منعقد ہوئی جس میں شرکت کے لئے جرمنی سے تشریف لانے والے ڈاکٹر جناب ’’اڈم کرڈنر‘‘ نے شوگر اور موٹاپے کو کم عمر کے اندر قلبی امراض کی پیشرفت کا باعث جانتے ہوئے کہا: افسوس کے ساتھ کہنا پڑرہا ہے کہ کم عمری میں قلبی امراض بہت زیادہ بڑھ رہی ہیں اور شوگر اور موٹاپا مزید نسل جوان میں قلبی امراض بڑھنے کا باعث بن رہا ہے۔ 
انہوں نے اس بات پر تاکید کی کہ ان خطرناک عوامل کی وجہ سے یہ احتمال دیا جا سکتا ہے کہ مستقبل میں جوان نسل کی عمر میں کمی آئے گی،لیکن کلی طور پر یہ کہا جا سکتا ہے کہ میڈیکل میں ترقی کی وجہ سے قلبی امراض میں کمی دیکھنے میں آرہی ہے۔ 
ڈاکٹر کرنر نے بتایا: گذشتہ چند سالوں میں قلبی امراض میں کافی پیشرفت ہوئی ہے اور یوں کہہ سکتے ہیں کہ جدید ٹیکنالوجوی اور جدید ابزار کی وجہ سے ہر قسم کی قلبی مرض کا علاج و معالجہ ممکن ہے۔ 
انہوں نے بتایا: وہ افراد جن کی عمر بڑھ چکی ہے ان کا ہارٹ آپریشن تھوڑا خطرناک ہے جس میں انہیں آنجیوگرافی کے ذریعہ دریچہ قلب کو تعویض یا اس کا پیوند لگایا جا سکتا ہے اور اس وقت یہ روش بہت زیادہ پیشرفت کر چکی ہے۔ 
اس جرمن ہارٹ اسپیشلسٹ نے بتایا: قلبی امراض میں ٹیکنالوجی کی وجہ سے جو پیشرفت دیکھنے میں آئی ہے اس کی وجہ سے تقریباً ۹۰ فیصد رگوں اور شریانوں کی بندش کا علاج ممکن ہے۔ 
قابل توجہ ہے ؛ ایران و یورپین ہارٹ اسپیشلسٹ ڈاکٹرز کی دوسری بین الاقوامی کانگریس رضوی ہسپتال میں ۱۴ آذرماہ (شمسی مہینہ) سے شروع ہوئی ہے اور ۱۷ آذرماہ تک جاری رہے گی۔ 
   
 
آپ کی رائے

نظر شما
نام
پست الكترونيک
وب سایت
نظر
...